Taleemi-aur-amli-door-min

تعلیمی دور اور عملی زندگی

تعلیمی دور اور عملی زندگی

سلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مدظلہ الاقدس کی تعلیم کا باقاعدہ آغاز دیپال پور ضلع اوکاڑہ (پاکستان )سے ہوا۔ باوجود اس کے کہ آپ مدظلہ الاقدس پر اس وقت معاشی تنگی کا بہت دبائو تھا، پھر بھی اللہ تعالیٰ کی عطا کردہ بے انتہا ذہانت اور خداداد صلاحیتوں کے باعث جلد ہی ناظرہ قرآن مکمل کر لیا اور دیگر دینی علوم کی تعلیم بھی حاصل کی۔ بچپن سے ہی ذاتِ حق تعالیٰ سے قلبی وابستگی کی وجہ سے دین و قرآن کے علم میں روحانی سکون حاصل ہوتا۔ نہ صرف قرآن بلکہ اسلام اور اسلامی تاریخ سے متعلق دیگر کتب بھی متوجہ کرتیں۔ ان کے مطالعہ سے اسلام کے متعلق بہت سا علم بغیر کسی استاد کے ازخود حاصل کر لیا۔
دینی تعلیم کے علاوہ میٹرک تک تعلیم آپ نے گورنمنٹ ہائی سکول دیپال پور ضلع اوکاڑہ (پاکستان ) سے مکمل کی۔
آپ مدظلہ الاقدس اپنے سکول کے اس دور کے بہترین طالب ِ علم تھے اور آپ کا شمار ذہین ترین طلبا میں ہوتا تھا۔ ذہانت کے ساتھ ساتھ انتظامی صلاحیتوں کی وجہ سے جماعت دہم تک کلاس کے مانیٹر رہے۔
آپ مدظلہ الاقدس کی ذہانت اور قلمی صلاحیتوں کا اظہار بچپن سے ہی ہونے لگا جب آپ نے پانچویں جماعت میں ہی اخبارات میں بچوں کے صفحات میں مضمون نویسی کا آغاز کر دیا۔ روزنامہ وفاق لاہور‘ روزنامہ مساوات لاہور‘ روزنامہ مشرق لاہور اور روزنامہ امروز لاہور کے بچوں کے صفحات میں آپ مدظلہ الاقدس کے مضامین شائع ہوتے رہتے ۔
آپ مدظلہ الاقدس کی غیر معمولی شخصیت کے اعلیٰ اوصاف تعلیمی میدان کے ساتھ ساتھ غیر نصابی سرگرمیوں میں بھی نمایاں تھے۔ درحقیقت اللہ جن بندوں کو اپنے لیے چن لیتا ہے عزت و شرف اور بزرگی زندگی کے ہر لمحے اور ہر شعبے میں ان کا مقدر ہوتی ہے۔ ذاتِ حق تعالیٰ ان کی ذات میں ظاہر ہونے کے باعث انہیں ہر جگہ سب سے نمایاں اور اعلیٰ مقام حاصل ہوتا ہے۔ اس مقام کے حصول میں فضل ِ خداوندی کے ساتھ ساتھ ان کی ذاتی محنت‘ خلوص‘ نیک نیتی اور ہمت بھی شامل ہوتی ہے۔ یہ ہستیاں بحیثیت ِمجموعی اعلیٰ ترین اوصاف کا مجموعہ ہوتی ہیں۔ اپنے زمانے کے لحاظ سے ہر پسندیدہ خوبی ان میں موجود ہوتی ہے جو انہیں ان کے ہم عصروں میں سب سے ممتاز بنادیتی ہے۔ چنانچہ سلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مدظلہ الاقدس نہ صرف تعلیمی میدان میں ہر جماعت میں صف ِاوّل کے طلبہ میں شامل تھے بلکہ تحریری و تقریری مقابلوں میں بھی حصہ لیتے۔ یہاں بھی کامیابیاں آپ کا مقدر ہوتیں۔ ساتھ ساتھ کھیلوں میں بھی حصہ لیا۔ بیڈمنٹن‘ کرکٹ اور ہاکی شوق سے کھیلی اور ہاکی کے بہترین کھلاڑی رہے۔
آپ مدظلہ الاقدس کے والدین کو آپ مدظلہ الاقدس کے بچپن سے ہی مالی تنگیوں اور سختیوں کا سامنا تھا ۔گزارہ بھی مشکل سے ہوتا تھا اِس لیے آپ باقاعدہ تعلیمی اداروں میں تعلیم جاری نہ رکھ سکے اور محنت مزدوری کے ساتھ ساتھ آپ مدظلہ الاقدس نے پرائیویٹ ہی 1980ء میں انٹرمیڈیٹ اور1983ء میں فرسٹ ڈویژن میں گریجویشن مکمل کی۔

عملی زندگی

1983ء میں اوکاڑہ کو ضلع کا درجہ حاصل ہو چکا تھا اور بہت سے ضلعی دفاتر کا قیام عمل میں آچکا تھا۔ آپ مدظلہ الاقدس نے ایک ضلعی دفتر میں کچھ عرصہ ملازمت کی لیکن آپ دیکھ رہے تھے کہ اس علاقے میں رہتے ہوئے زیادہ ترقی کرنا ممکن نہیں دوسرے آپ کا دل بھی اس علاقہ سے اچاٹ ہو چکا تھا اس لیے آپ اکثر مختلف عہدوں کے لیے انٹرویو اور امتحانات کے لیے لاہور تشریف لاتے رہتے تھے۔ آخرکار 28 مارچ 1985 ء کو آپ کو لاہور میں سرکاری ملازمت مل گئی اور 12 اپریل 1985ء کو لاہور منتقل ہوگئے اور اس ہجرت کے ساتھ ہی آپ مدظلہ الاقدس پر مالی آسودگی اور دنیاوی راحتوں کے تمام دروازے اللہ پاک نے کھول دئیے۔