sultan-ul-ashiqeen-ki-Shekseyat

سلطان العاشقین کی شخصیت

سلطان العاشقین کی شخصیت

سلطان العاشقین کی شان قرآن و حدیث کی روشنی میں 

سلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مدظلہ الاقدس کی باکمال و بے مثال شخصیت کو الفاظ کے محدود دائرہ میں قید کرکے بیان کرنا نا ممکن ہے۔ وہ صرف اللہ ہی ہے جو اپنے محبوبوں کی شان کو بہترین الفاظ میں بیان کرتا ہے۔ آپ مدظلہ الاقدس کی شخصیت ان آیاتِ قرآنی اور احادیث کی عین عکاس ہے۔
* آپ کا وصف ۔ تقویٰ
اِنَّ اَکْرَمَکُمْ عِنْدَ اللّٰہِ اَتْقَکُمْ ۔(الحجرات۔13)
ترجمہ: بیشک اللہ کے نزدیک تم میں سے عزت والا وہ ہے جو تقویٰ رکھتا ہے۔
* آپ کا باطن۔ آئینہ حق
المومن مراۃ الرحمن  ترجمہ: مومن رحمن کا آئینہ ہے۔
* آپ کا ظاہر ۔نور
نُوْرٌ عَلٰی نُوْرٍ ط یَھْدِی اللّٰہ لِنُوْرِہٖ مَنْ یَّشَآ ءُ (النور۔35)
ترجمہ:نور پر نور ہے۔ اللہ اپنے نور کی طرف ہدایت دیتا ہے جسے چاہتا ہے۔
* آپ کا قلب مبارک۔ عرش اللہ
قَلْبُ الْمُؤْمِنِ عَرْشَ اللّٰہِ تَعَالٰی   ترجمہ: مومن کا قلب اللہ کا عرش ہے۔
* آپ کا مبارک وجود۔ حدیثِ قدسی کے مصداق:
 وَمَا يَزَالُ عَبْدِي يَتَقَرَّبُ إِلَيَّ بِالنَّوَافِلِ حَتَّى أُحِبَّهُ ، فَإِذَا أَحْبَبْتُهُ كُنْتُ سَمْعَهُ الَّذِي يَسْمَعُ بِهِ ، وَبَصَرَهُ الَّذِي يُبْصِرُ بِهِ ، وَيَدَهُ الَّتِي يَبْطِشُ بِهَا ، وَرِجْلَهُ الَّتِي يَمْشِي بِهَا
* میرا بندہ جب زائد نوافل کے ذریعے میرے قریب ہو جاتا ہے تو میں اس سے محبت کرنے لگتا ہوں۔ پس میں اس کے کان بن جاتا ہوں وہ ان سے سنتا ہے ، میں اس کی آنکھیں بن جاتا ہوں جن سے وہ دیکھتا ہے، اس کے ہاتھ بن جاتا ہوں جن سے وہ پکڑتا ہے اور اس کے پاؤں بن جاتا ہوں جن سے وہ چلتا ہے۔(بخاری شریف۔963)

آپ کی مبارک ذات۔ ان احادیث کے مطابق
* اللہ تعالیٰ کے چند بندے ایسے ہیں جو نہ نبی ہیں نہ شہید لیکن روزِ قیامت انبیاء اور شہدا ان پر رشک کریں گے۔
* اللہ تعالیٰ کے دوستوں کی یہ صفت ہے کہ ان کی گفتار ، لباس، سانسوں ، رہائش یہاں تک کہ ان کے قدموں کی خاک اور وہ جگہ جہاں انہوں نے ایک دِن کے لیے قیام کیا ہو ، میں برکتیں موجود ہوتی ہیں۔(منہاج العابدین )
* آپ کا عمل ۔ صرف اللہ کے لیے
قُلْ اِنَّ صَلَاتِیْ وَنُسْکِیْ وَمَحْیَایَ وَمَمَاتِیْ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلِمِیْنَ  ۔ (الانعام۔162)
ترجمہ: تم فرماؤ بیشک میری نماز اور میری قربانی اور میرا جینا اور میرا مرنا سب اللہ کے لیے ہے جو تمام عالموں کا ربّ ہے۔
* آپ کا مقام ۔ لی مع اللّٰہ 
* آپ کی شان۔ کُلَّ یَوْمٍ ھُوَ فِیْ شَاْنٍ
* آپ کا شعار ۔ محبت فاتح عالم
* آپ کا اصول۔ عمل پیہم یقینِ کامل۔
* آپ کی تعلیم۔ اللہ بس ماسویٰ اللہ ہوس
* آپ کا ذکر ۔ سلطان الاذکار ھُو
* آپ کے ذکر کا طریقہ ۔
وَاذْکُرْرَّبَّکَ فِیْ نَفْسِکَ تَضَرُّعًا وَّ خِیْفَۃً وَّ دُوْنَ الْجَھْرِ مِنَ الْقَوْلِ بِالْغُدُوِّ وَالْاٰصَالِ وَلَا تَکُنْ مِّنَ الْغٰفِلِیْنَo (اعراف۔ 205)
ترجمہ: اور صبح و شام ذکر کرو اپنے ربّ کا، دِل میں، سانسوں کے ذریعہ، بغیر آواز نکالے خُفیہ طریقے سے، عاجزی کے ساتھ اور غافلین میں سے مت بنو۔
آپ کا اخلاق ۔تَخَلَّقُوْا بِاَخْلَاقِ اللَّہ  ترجمہ: اللہ کے اخلاق سے متخلق ہو جاؤ۔
آپ کی تلقین۔فَفِرُّوْآ اِلَی اللّٰہ   ‘‘ (الذٰرےٰت۔50) ترجمہ:پس دوڑو اللہ کی طرف۔
فَلَا تَتَّبِعِ الْھَوٰی فَیُضِلَّکَ عَنْ سَبِیْلِ اللّٰہِ  (ص۔26)
ترجمہ: اور(نفس کی) خواہش کی پیروی نہ کرنا ورنہ (یہ پیروی) تمہیں راہِ خدا سے بھٹکا دے گی۔