Tehreek-dawat-e-faqr-ka-qiaam

تحریک دعوتِ فقرکا قیام

تحریک دعوتِ فقر (رجسٹرڈ)کا قیام

دعوتِ فقر ایک تحریک ہے جو حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کے دور سے مسلسل کسی نہ کسی شکل اور صورت میں جاری رہی ہے۔ موجودہ دور میں اس تحریک اور دعوت کو آگے بڑھانے کے لیے موجودہ دور کی ضرورت اور تقاضوں کے مطابق ایک جماعت یا تنظیم کی ضرورت تھی۔ اس لیے سلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مد ظلہ الاقدس نے اپنے مرشد پاک سلطان الفقر ششم حضرت سخی سلطان محمد اصغر علی رحمتہ اللہ علیہ کے عرس کے موقع پر23۔اکتوبر 2009ء (3۔ذیقعد 1430ھ) بروز جمعتہ المبارک ’’تحریک دعوتِ فقر‘‘ کی بنیاد رکھی تاکہ دعوتِ فقر کو ایک منظم تحریک کی صورت میں آگے بڑھایا جاسکے۔
تحریک دعوتِ فقر ایک رجسٹرڈ اور غیر سرکاری و غیر سیاسی جماعت ہے جس کا فرقہ واریت سے کوئی تعلق نہیں۔ تحریک دعوتِ فقر کے قیام کا مقصد دنیا بھر کے لوگوں کو راہِ فقر کی دعوت دینا ہے تاکہ وہ اللہ کا قرب حاصل کر سکیں اور وہ روحانی پاکیزگی حاصل کر سکیں جولقائے الٰہی اور مجلسِ محمدی صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کی حضوری حاصل کرنے کے لیے ضروری ہے۔
تحریک دعوتِ فقر کے قیام کے اغراض و مقاصد ، منشور اور قواعد و ضوابط مندرجہ ذیل ہیں:

تحریک دعوتِ فقر(رجسٹرڈ) کے قیام کے اغراض ومقاصد

تحریک دعوتِ فقر کے قیام کے مندرجہ ذیل اغراض و مقاصد ہیں:
* لقائے الٰہی اور معرفتِ الٰہی کے فریضہ کی ادائیگی 
* حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کی مجلس کی حضوری اور ان سے بلاواسطہ فیض حاصل کرنا
* تزکیۂ نفس 
* تصفیۂ قلب
* تجلّیہ روح 
* روحانی پاکیزگی اور ظاہری و باطنی درستی 
* دنیا اور آخرت میں اللہ کے ہاں کامیابی 
* عبادات میں قلب کی حضوری 
* اللہ کے سوا غیر کی محتاجی سے نجات 
* مقصدِ حیات میں کامیابی 
مندرجہ بالا تمام مقاصد کے حصول کے لیے ذکر و تصور اسمِ اللہ ذات ضروری ہے اور اس کے لیے راہِ فقر اختیار کرنا ناگزیر ہے۔
شبیہِ غوث الاعظم سلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مد ظلہ الاقدس نے انہی مقاصد کو پیشِ نظر رکھتے ہوئے تحریک دعوتِ فقر کا آغاز کیا تاکہ زیادہ سے زیادہ لوگوں کو منظم طریقے سے فقر کی طرف متوجہ کیا جائے اور اس پُر فتن اور ظاہر پرست دور میں دین کی روح ایک بار پھر چودہ سو سال پہلے کی طرح زندہ کی جا سکے۔اللہ تعالیٰ آپ مد ظلہ الاقدس کو آپ کے اس نیک و اعلیٰ مقصد میں کامیابی عطا فرمائے (آمین)

تحریک دعوتِ فقر (رجسٹرڈ)کے قواعدو ضوابط

1۔ تحریک دعوتِ فقر میں وہی لوگ شامل تصور ہوں گے جو سلطان الفقر حضرت سخی سلطان محمد اصغر علی رحمتہ اللہ علیہ یا سلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مدظلہ الاقدس کے دستِ بیعت ہوں گے یا انہوں نےسلطان العاشقین  مدظلہ الاقدس سے ذکر و تصور اسمِ اللہ ذات حاصل کیا ہوگا۔

2۔ ا: ہمارا دین اسلام ہے اور حضورِ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم ہمارے ہادی اور رسول ہیں۔ مشرباً ہم سروری قادری ہیں اور سیّدنا غوث الاعظم حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی رضی اللہ عنہٗ اور سلطان العارفین حضرت سخی سلطان باھُو رحمتہ اللہ علیہ کے ’’طریقۂ فقر‘‘ پر ہیں۔ ہم حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کے حقیقی ورثہ ’’فقر‘‘ کو عام کرنے نکلے ہیں اس لیے ہمارا کسی فرقہ ، مسلک اور مذہبی جماعت سے کوئی تعلق نہیں ہے اور نہ ہی یہ کسی خاص فرقہ یا مسلک کی جماعت ہے۔ اس میں سب فرقوں ، مسالک اور سلاسل کے لوگ اس نیت کے ساتھ شامل ہو سکتے ہیں کہ وہ ذکرو تصور اسمِ 3 ذات سے تزکیۂ نفس کرکے اپنے باطن کو درست کرکے صراطِ مستقیم حاصل کرسکیں کیونکہ ارشادِ باری تعالیٰ ہے ’’جو خود کو بدلنا نہیں چاہتا میں اس کی حالت نہیں بدلتا۔‘‘ کسی کو بھی تحریک کے اندر فرقہ پرستی کے پرچار کی قطعاً اجازت نہیں دی جائے گی۔
ب۔ تحریک دعوتِ فقریا اس کا کوئی عہدیدار یا ذمہ دار کسی مسلکی، فرقہ وارانہ ، مذہبی جماعت، مذہبی سیاسی جماعت یا سیاسی جماعت پر تنقید نہیں کرے گا اور نہ ہی ان کے کسی جلسے، جلوس اور اجلاس میں شریک ہوگا۔ 
ج۔ ’’تحریک دعوتِ فقر‘‘صرف فقر کی دعوت دے گی اور کسی مسلک، فرقہ پرستی اور سیاسی یا مذہبی جھگڑے میں ملوث نہ ہوگی۔
3۔ اہلِ بیتؓ سفینہ نوحؑ کی مانند اور صحابہ کرامؓ ستاروں کی مانند ہیں اور اُن سے یکساں محبت ایمان کا حصہ اور راہِ فقر میں معاون و مدد گار ہے۔ اہلِ بیتؓ سے محبت نہ رکھنے والا یا بغض رکھنے والا خارجی اور صحابہ کرامؓ سے محبت نہ رکھنے والا اور اُن سے بغض رکھنے والا رافضی ہے۔ ایسے نظریات رکھنے والوں کے لیے ’’تحریک دعوتِ فقر‘‘ میں کوئی جگہ نہیں ہے ۔ البتہ جو خلوصِ نیت سے حقیقت سے آگاہی چاہتا ہے وہ ’’تحریک دعوتِ فقر ‘‘ میں شامل ہو سکتا ہے کیونکہ علمِ باطن ہی سے اہلِ بیت ؑ اور صحابہ کرامؓ کی عظمت سے آگاہی ہوتی ہے ۔علمِ ظاہر تو جھگڑے اور فساد پیدا کرتا ہے۔
4۔ اپنے مرشد پاک کی ہرہدایت پر بلاچوں و چرا عمل کرنا ہوگا۔
5۔ مرشد کی ہدایت کے مطابق شریعت کی پابندی کریں، ذکر و تصور اسمِ اللہ ذات پابندی سے کریں اورفقر کی جو تعلیم اور ہدایت دِی جائے ا س پر بھی سختی سے عمل کریں۔
6۔ ا: تحریک دعوتِ فقر کا سیاست ، سیاسی معاملات یا سیاسی امور سے کوئی تعلق نہیں ہے اور نہ ہی تحریک کسی سیاسی جماعت اور اس کی پالیسیوں کی حمایت یا مخالفت کرے گی۔تحریک کے کسی بھی عہدیدار ، مجلسِ شوریٰ کے ممبر ، جنرل کونسل کے ارکان اور علاقائی عہدیداران کو سیاست میں حصہ لینے کی اجازت نہ ہوگی۔
ب: تحریک دعوتِ فقر اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین کو تسلیم اور اس کا احترام کرتی ہے اور اسلامی جمہوریہ پاکستان کا آئین ہر پاکستانی کو سیاسی امور میں حصہ لینے کی آزادی دیتا ہے ۔ لیکن تحریک دعوتِ فقر کا کوئی بھی مرکزی، علاقائی عہدیدار ، مجلسِ شوریٰ کا ممبر یا جنرل کونسل کا رکن اگر سیاست میں حصہ لینا چاہتا ہے تو اُسے اپنے عہدہ سے استعفیٰ دینا ہوگا اور وہ تحریک کا نام، اس کے وسائل، ارکان اور تحریک کا پلیٹ فارم اپنے سیاسی مقاصد کے لیے استعمال نہیں کرسکے گا۔
ج۔ انتخابات کے وقت تحریک دعوتِ فقر یا اس کا کوئی عہدیدار، ذمہ دار اجتماعی یا انفرادی طور پر کسی سیاسی جماعت یا سیاسی مذہبی جماعت کو ووٹ دینے کا نہ تو حکم دے گا اور نہ ہی اس کے لیے جماعت کے اندر کام کرے گا۔ جماعت کے مخلصین کو اپنے اپنے ضمیر کے مطابق ووٹ دینے کا حق حاصل ہوگا اور وہ اُن کا اپنے ضمیر کے مطابق انفرادی فیصلہ ہوگا اور تحریک دعوتِ فقر اس کی ذمہ دار نہ ہوگی۔
7۔ تحریک سے منسلک لوگ اللہ تعالیٰ کی تمام مخلوق سے محبت کریں ۔کسی سے گناہ کی وجہ سے نفرت نہ کریں بلکہ گناہ سے نفرت کریں اور اپنے اس بھائی کو گناہ کی دلدل سے نکالنے کے لیے دعوتِ فقر دیں۔ 
8۔ قرآن پاک کی تلاوت کریں اور اس کی ایک ایک آیت پر غورو فکر کریں۔
9۔ آپس میں اختلافات سے گریز کریں اور اگر کوئی تحریک دعوتِ فقر میں نفاق پھیلا ئے تو اس کی اطلاع فوراً منتظمِ اعلیٰ یا مجلسِ شوریٰ کے کسی ممبر کو دیں تاکہ اس کو تحریک سے نکالا جاسکے۔
10۔غصہ پر کنٹرول کریں کیونکہ غصہ شیطان کا ایک ہتھیار ہے۔ غصہ لڑائی جھگڑا پیدا کرتا ہے اور لڑائی جھگڑے والے کو تحریک میں برداشت نہیں کیا جائے گا۔
11۔ کسی کو تحریک دعوتِ فقر کے اندر اپنی ذاتی شخصیت کو نمایاں اور اجاگر کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی ۔یاد رکھیں بہتر وہ ہے جوتقویٰ میں سب سے آگے ہے اور سلطان العارفین ؒ کے قول کے مطابق تقویٰ صرف اور صرف اسمِ ھُو کے ذکر سے حاصل ہوتا ہے۔
12۔اگر ’’تحریک دعوتِ فقر‘‘کے کسی بھی رکن کو کسی کی ذات سے کوئی تکلیف پہنچ جائے تو فوراً اس کو معاف کردیں۔ دِل میں بغض، کینہ، حسد ، انتقام کا جذبہ رکھنا فقر کی راہ کو بند کر دیتا ہے۔
13۔ اگر تحریک کے ممبر سے کسی کو تکلیف پہنچے اور اس کی دِل آزاری ہو تو فوراً اس سے معافی مانگ لیں قطع نظراس کے کہ وہ آپ سے امیر ہے یا غریب ،چھوٹا ہے یا بڑا۔
14۔عملی اور دنیاوی زندگی میں شرعی اصولوں کے مطابق خلوصِ نیت سے مکمل جد و جہد اور کوشش کریں لیکن توکّل صرف اللہ تعالیٰ کی ذات پر کریں اور جو بھی نتیجہ نکلے اسے اللہ تعالیٰ کی رضا سمجھ کر سرِ تسلیم خم کردیں۔ 
15۔یاد رکھیں کامیاب وہی ہوتا ہے جسے اپنے مشن پر یقینِ محکم ہو اور وہ اس مشن کو عام کرنے میں مسلسل عمل میں مصروف رہے اور مشن کی تکمیل محبت سے ہوتی ہے اور محبت ہی فاتحِ عالم ہے نفرت نہیں۔
16۔ تمام عہدیداران کو تحریک کی جانب سے موبائل فون کے سِم کارڈ حلف برداری کے بعد دئیے جائیں گے۔ عہدیداران یہ سِم کارڈ عہدے کی مدت ختم ہونے پر تحریک کے نئے منتخب عہدیداران کے حوالے کردیں گے یہ سِم کارڈ صرف تحریک کے کاموں کے لیے استعمال ہوں گے۔

تحریک دعوتِ فقر(رجسٹرڈ) کا منشور

1۔ تحریک دعوتِ فقر تما م مسلمانوں کو ’’متحد ہو کر اللہ کی رسی کو مضبوطی سے تھام لو اور آپس میں تفرقہ نہ ڈالو‘‘کی دعوت دیتی ہے اور وہ رسی اسمِ اللہ ذات ہے۔
2۔ ’’فقر ‘‘ حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کا حقیقی ورثہ ہے۔ مسلمانوں کو اسی ورثہ کو حاصل کرنے کی دعوت دیناہی تحریک کا منشور ہے۔
3۔ فقر کے حصول کے لیے ’’ذکر و تصور اسمِ اللہ ذات‘‘ کی دعوت دینا۔ کیونکہ حضرت سخی سلطان باھُو رحمتہ اللہ علیہ کے قول کے مطابق اسی سے فقر یعنی لقائے الٰہی اور مجلسِ محمدی کی حضوری حاصل ہوتی ہے اور ایک مسلمان مومن بن کر مرتبۂ احسان پر فائز ہوتا ہے۔
4۔ لوگوں کو فَفِرُّوْٓا اِلَی اللّٰہِ  (ترجمہ: دوڑو اللہ کی طرف)یعنی’’ دوڑو اسمِ اللہ ذات کی طرف‘‘ کی دعوت دینا ۔
5۔ رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کی تعلیماتِ حقانیہ پر صدقِ دِل سے عمل کرنا ۔
6۔ غورو فکر یعنی تفکر کی دعوت دینا۔
7۔ بلا تفریق آپس میں محبت کو فروغ دینا اور دنیا سے نفرت کو ختم کرنا۔
تحریک دعوتِ فقر آپ کو دعوت دیتی ہے ذکر و تصورِ اسمِ اللہ ذات کی کیونکہ اسی سے:
* قلبی، نفسی اور روح کی بیماریوں سے نجات حاصل ہوتی ہے۔
* تزکیۂ نفس ہوتا ہے۔
* تصفیہ قلب ہوتا ہے۔
* تجلّیہ روح کی منزل حاصل ہوتی ہے۔
ذکر اور تصور اسمِ اللہ ذات کے بغیر مندرجہ ذیل منازلِ فقر کا حصول تو تقریباً ناممکن ہے:
* بارگاہِ حق تعالیٰ کی حضوری ۔
* مجلسِ محمدی کی حضوری ۔
’’تحریک دعوتِ فقر‘‘ میں شامل ہو کر اسمِ اللہ ذات کا ذکر اور تصور کریں۔ اور ’’مقصدِ حیا ت‘‘ میں کامیاب و کامران ہو کر اللہ کی بارگاہ میں پیش ہو ں۔

تحریک دعوتِ فقر(رجسٹرڈ) کا دستور

’’تحریک دعوتِ فقر‘‘ کو منظم انداز میں چلانے کے لیے ایک آئین (دستور) تشکیل دیاگیا ہے۔ اس دستورکے تحت تحریک کا مرکزی دفتر لاہور (4-5/Aایکسٹینشن ایجوکیشن ٹاؤن وحدت روڈ ) میں ہے جبکہ پورے ملک میں تحریک دعوتِ فقر کے علاقائی دفاتر قائم کیے گئے ہیں اور مزید دفاتر کا قیام عمل میں لایا جا رہا ہے۔ ہر علاقے میں تحریک کے کام کو منظم و مربوط طریقے سے سر انجام دینے کے لیے وہاں کے اہم و مخلص مریدین پر مشتمل مجلسِ شوریٰ اور جنرل کونسل تشکیل دی جاتی ہے جو باہمی مشاورت سے تحریکی سرگرمیوں کے لیے لائحہ عمل تیار کرتی ہے۔ 
(1) مجلسِ شوریٰ: تحریک کاسب سے اہم ادارہ ہے۔ دستور کے مطابق اس میں شامل لوگوں کو تقویٰ کی بنیاد پر منتخب کیا جاتا ہے۔ اس کے ممبران کی زیادہ سے زیادہ تعداد 35ہے جو ہر سال منتخب کیے جاتے ہیں۔ باہمی مشاورت سے تحریک کا نظام چلانا اس کی ذمہ داری ہے ۔ مشاورت اسلامی اورجمہوری طریقہ کے مطابق ہوتی ہے۔
(2) جنرل کونسل:یہ تحریک کے مخلصین پر مشتمل ایک وسیع ادارہ ہے جس کے ممبران کی حد مقرر نہیں کی گئی۔ مجلسِ شوریٰ کسی فیصلہ کے بعد اگر چاہے تو اسے جنرل کونسل میں پیش کرکے ان مخلصین کو اعتماد میں لیتی ہے یا جب وسیع مشاورت درکار ہو تو دستور کے مطابق مجلسِ شوری اور جنرل کونسل کا مشترکہ اجلاس بھی طلب کیا جا سکتا ہے ۔

تحریک دعوتِ فقر (رجسٹرڈ) کے شعبہ جات

(1) شعبہ دعوت و تبلیغ: تمام دستیاب ذرائع کو بروئے کار لاتے ہوئے دنیا بھر میں فقر کی دعوت و تبلیغ اس شعبہ کی ذمہ داری ہے۔
(2) شعبہ نشر واشاعت: ’تحریک دعوتِ فقرکو عام کرنے کے لیے ہر طرح کی مطبوعہ اشیاء کی تیاری اس کی ذمہ داری ہے۔ ماہنامہ سلطان الفقر لاہور اور سلطان الفقر پبلیکیشنز(رجسٹرڈ) اسی شعبہ کے تحت کام کرتے ہیں۔ 
(3) شعبہ ملٹی میڈیا ڈیزائن ایند ڈویلپمنٹ: تحریک دعوتِ فقر کی تمام ویب سائٹس کو تیار کرنا، ان کی نگرانی کرنا اور بوقتِ ضرورت اہم تبدیلیاں کرنا اس شعبہ کی ذمہ داری ہے۔ اس کے علاوہ سلطان الفقر پبلیکیشنز(رجسٹرڈ) کی طرف سے شائع کردہ تمام کتب و رسائل کو آن لائن (Online) مطالعہ کے لیے تحریک دعوتِ فقر کی تمام ویب سائٹس پر مہیا کرنا بھی اس شعبہ کی ذمہ داری ہے۔سلطان الفقر ڈیجیٹل پروڈکشنز اس کا ایک ذیلی شعبہ ہے جس کا کام فقر کی تبلیغ اور تحریک دعوتِ فقر کی سرگرمیوں پر مبنی آڈیوز اور ویڈیوز (upload) تیار کرنا اور انہیں آن لائن مہیا کرنا ہے۔
(4) شعبہ بیت المال: ’تحریک دعوتِ فقر کے فروغ کے لیے منسلکین اور مخلصین سے چندہ جمع کرنا، اس کو شعبہ جات میں خرچ کرنے کے لیے تقسیم کرنا اور اس کا حساب رکھنا اس شعبہ کی ذمہ داری ہے۔
(5) شعبہ قیام و طعام : مرکزی دفتر تحریک دعوتِ فقر اورخانقاہ میں مستقل قیام پذیر اور باہر سے آنے والے ساتھیوں اور محافل کے لیے طعام تیار کرنا اور تقسیم کرنا اس شعبہ کی ذمہ داری ہے۔ 
(6) شعبہ سکیورٹی : خانقاہ ، مرکزی دفتر تحریک دعوتِ فقر اورسلطان العاشقین حضرت سخی سلطان محمد نجیب الرحمن مدظلہ الاقدس کی رہائش گاہ کی نگرانی اس شعبہ کی ذمہ داری ہے۔یہ شعبہ آپ مدظلہ الاقدس کی ذاتی سکیورٹی کے فرائض بھی سر انجام دیتا ہے۔
تحریک دعوتِ فقر کو دنیا بھر میں متعارف کروانے کے لیے انگلش میں https://www.tehreekdawatefaqr.com  اور https://tehreekdawatefaqr.net ویب سائٹس بنائی گئی ہیں جس پر دنیا کی ہر زبان میں ترجمہ کرنے کی صلاحیت موجود ہے اور اردو زبان سمجھنے کے لیے اردو ویب سائٹ   https://urdu.tehreekdawatefaqr.com   بھی موجود ہے۔